تاریخ شائع کریں2022 28 September گھنٹہ 18:33
خبر کا کوڈ : 567054

امریکی قبضے کے آفٹر شاکس؛ 97% افغان عوام غربت کی لکیر سے نیچے آنے کے دہانے پر ہیں

اس قبضے کے نتائج کے بعد اقوام متحدہ کے بچوں کے فنڈ نے اعلان کیا ہے کہ افغانستان کے 97% لوگ خط غربت سے نیچے آنے کے دہانے پر ہیں۔
امریکی قبضے کے آفٹر شاکس؛ 97% افغان عوام غربت کی لکیر سے نیچے آنے کے دہانے پر ہیں
افغانستان میں 20 سال کی جنگ اور امریکی قبضے نے اس ملک کے معاشرے اور معیشت پر ایسے گہرے زخم لگائے ہیں کہ لگتا نہیں ہے کہ زیادہ دیر تک مندمل ہونے کی کوئی خبر آئے گی۔ اس قبضے کے نتائج کے بعد اقوام متحدہ کے بچوں کے فنڈ نے اعلان کیا ہے کہ افغانستان کے 97% لوگ خط غربت سے نیچے آنے کے دہانے پر ہیں۔

 افغان صدر کی خبر رساں ایجنسی کے حوالے سے اقوام متحدہ کے اس ذیلی ادارے نے افغان عوام کی صورت حال کے بارے میں اپنی اگست کی رپورٹ شائع کرتے ہوئے کہا: 13 ملین بچوں سمیت 24.4 ملین افغان شہریوں کو انسانی امداد کی ضرورت ہے۔

تنظیم کی اگست کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ افغانستان میں 18.9 ملین افراد کو جون اور نومبر 2022 کے درمیان ہنگامی صورتحال یا غذائی عدم تحفظ کے بحران کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اس رپورٹ کے مطابق پانچ سال سے کم عمر کے 1.1 ملین بچے شدید غذائی قلت کا شکار ہیں۔

اس رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ 2021 میں افغانستان کے اندر تقریباً 7 ملین افراد بے گھر ہو چکے ہیں۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ افغانستان میں آٹھ ملین بچوں کو تعلیم تک رسائی کے لیے مدد کی ضرورت ہے۔

یونیسیف نے مزید کہا کہ اگر اساتذہ کی تنخواہیں ادا نہیں کی گئیں اور غربت کی گرتی ہوئی سطح جاری رہی تو 10 ملین بچوں کے سکول چھوڑنے کا خطرہ ہو گا۔

آفس آف چائلڈ پروٹیکشن نے ایسے بچوں کی تعداد 4.5 ملین بتائی ہے جنہیں ذہنی صحت کی مدد کی ضرورت ہے.
 
http://www.taghribnews.com/vdcgnu9ntak93z4.,0ra.html
آپ کا نام
آپکا ایمیل ایڈریس