QR codeQR code

ہماری خارجہ پالیسی کے نظریے اور عقائد میں کوئی ایٹم بم نہیں ہے

27 May 2022 گھنٹہ 10:43

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ صیہونی ایرانی جوہری مسئلے پر بہت زیادہ جھوٹ بول رہے ہیں، لیکن امریکی اچھی طرح جانتے ہیں کہ اگر وہ جوہری معاہدے پر واپس جانا چاہتے ہیں تو انہیں کیا کرنا چاہیے۔


ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکی حکام بخوبی جانتے ہیں کہ اگر وہ جوہری معاہدے کی طرف واپس آنا چاہتے ہیں تو ان سے کیا ضروری ہے، ویانا مذاکرات میں تاخیر کی بنیادی وجہ منظور شدہ تمام اقتصادی فوائد کے لیے ایران کا اپنے مکمل حق پر قائم رہنا ہے۔

یہ بات حسین امیرعبداللہیان نے جمعرات کے روز سوئٹزرلینڈ کے شہر زیورخ میں ڈیووس میں ہونے والے ورلڈ اکنامک فورم کے سالانہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ہم نے سعودی عرب کے ساتھ اتفاق کیا کہ وزارت خارجہ کے حکام یا وزرائے خارجہ کے درمیان ہوگی۔

امیر عبداللہیان نے کہا کہ جب ریاض اپنے معمول تعلقات کو بحال کرنا چاہتا ہے تو ہم اس کا خیر مقدم کرتے  ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے حالیہ مذاکرات میں اچھی پیش رفت کی ہے اور مستقبل قریب میں وزارت خارجہ یا وزرائے خارجہ کے حکام کی سطح پر کسی تیسرے ملک یا متفقہ جگہ پر ملاقات کرنے پر بھی اتفاق کیا ہے، اس لیے پیشرفت چھوٹی لیکن اچھی رہی ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ صیہونی ایرانی جوہری مسئلے پر بہت زیادہ جھوٹ بول رہے ہیں، لیکن امریکی اچھی طرح جانتے ہیں کہ اگر وہ جوہری معاہدے پر واپس جانا چاہتے ہیں تو انہیں کیا کرنا چاہیے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم نے بار بار کہا کہ ہماری خارجہ پالیسی کے نظریے اور عقائد میں کوئی ایٹم بم نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ آئی اے ای اے نے بار بار تصدیق کی کہ ایران جوہری ہتھیار حاصل کرنے کی کوشش نہیں کر رہا ہے اور اب ہم اس مقام پر پہنچ چکے ہیں کہ اگر امریکی فریق حقیقت پسندانہ فیصلہ کرتا ہے تو ایک معاہدہ دستیاب ہے، ناجائز صیہونی ریاست ویانا مذاکرات میں کوئی معاہدہ نہیں چاہتی۔

امیرعبداللہیان نے ڈیووس سربراہی اجلاس میں فرید زکریا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کیوں پاسداران انقلاب کو امریکی دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل کرنے کا معاملہ جو کہ عام طور پر جوہری معاہدے سے تعلق کا مسئلہ نہیں ہے، ایران کے لیے مذاکرات کا نتیجہ اخذ کرنے کے لیے ضروری ہے؟ سچ پوچھیں تو مذاکرات میں تعطل کی وجہ کیا ہے؟ ہمارے معاشی مطالبات عالمی تجارت کی سمت میں ہیں اور اس معاملے کو ایک ایشو تک کم نہیں کیا جانا چاہیے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ حقیقت میں، امریکی دہشت گردوں کی فہرست میں سپاہ پاسداران کو شامل کرنے کا مسئلہ ایک ضمنی مسئلہ ہے جسے اسرائیلی لابی نے بڑھایا ہے اور ہمارے لیے ایرانی قوم کے مفادات کو ترجیح دی گئی ہے۔

انہوں نے یمن کے مسئلے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ تمام یمنی جماعتوں کو یمن کے مستقبل میں کردار ادا کرنا چاہیے، یمن میں انصار اللہ اور اس کے اتحادی جنگ کے مقابلہ کرنے کے قابل تھے۔ جنگ بندی جاری رہنی چاہیے اور یمن کا محاصرہ ختم ہونا چاہیے اور تمام یمنی فریقوں کو ایک میز کے گرد بیٹھ کر اپنے ملک کے بارے میں فیصلہ کرنا چاہیے۔

اس بات پر تاکید کرتے ہوئے کہ ہمارے پاس بہت سی معلومات ہیں کہ صیہونیوں نے امریکی خارجہ پالیسی کو یرغمال بنا رکھا ہے، امیر عبداللہیان نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا: یقیناً ایران کے پاس میز پر مختلف آپشنز موجود ہیں لیکن سب سے اہم بات ٹرمپ دور میں زیادہ سے زیادہ دباؤ کے عوامل کو ختم کرنا ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ اگر جو بائیڈن ایک اچھے اور دیرپا معاہدے تک پہنچنے کے لیے قدم نہیں اٹھاتے ہیں تو یقیناً ایران کے پاس میز پر مختلف آپشن موجود ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بیس سال قبل ناجائز صیہونی ریاست کے اس وقت کے وزیر اعظم نے دعویٰ کیا تھا کہ ایران ایک سال سے بھی کم وقت میں ایٹم بم حاصل کر لے گا، لیکن 20 سال گزر چکے ہیں اور ہم کئی بار کہہ چکے ہیں کہ ہماری خارجہ پالیسی میں ایٹمی بم کی کوئی جگہ نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ عالمی ایٹمی ادارے نے بار بار اعلان کیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ہتھیاروں کی تلاش میں نہیں ہیں بلکہ ناجائز صیہونی ریاست اپنی بات کو دہرا رہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ جوہری معاہدے میں ہم ایک ایسے مقام پر پہنچ گئے ہیں کہ اگر امریکی فریق حقیقت پسندانہ طور پر فیصلہ کرے تو ایک معاہدہ دستیاب ہے لیکن ناجائز صیہونی ریاست نہیں چاہتی اور اس لیے ایسی کہانیاں بناتی ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہم نے شام کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں شامی حکومت اور عوام کی مدد کرتے ہوئے دہشت گردوں کو اس سرزمین پر حکومت کرنے کی اجازت نہیں دی، کیونکہ اگر آج عراق اور شام میں داعش کی حکومت ہوتی تو دنیا مختلف ہوتی۔


خبر کا کوڈ: 551131

خبر کا ایڈریس :
http://www.taghribnews.com/ur/news/551131/ہماری-خارجہ-پالیسی-کے-نظریے-اور-عقائد-میں-کوئی-ایٹم-بم-نہیں-ہے

تقريب خبررسان ايجنسی (TNA)
  http://www.taghribnews.com