تقريب خبررسان ايجنسی 3 Jun 2022 گھنٹہ 16:10 http://www.taghribnews.com/ur/interview/552139/ہمیں-امام-خمینی-کے-مکتب-کو-تبدیل-اور-مسخ-کرنے-کی-اجازت-نہیں-دینی-چاہیے -------------------------------------------------- ٹائٹل : ہمیں امام خمینی کے مکتب کو تبدیل اور مسخ کرنے کی اجازت نہیں دینی چاہیے -------------------------------------------------- پارلیمنٹ میں خمینی شہر کے نمائندے نے اس بات پر تاکید کرتے ہوئے کہ ہمیں امام کے مکتب میں تحریف کی اجازت نہیں دینی چاہیے، کہا: "بدقسمتی سے امام خمینی کا طریقہ کار اور سادگی اور جمہوریت کے بارے میں پیشہ کچھ حکام میں بدل گیا ہے اور انہوں نے اپنے لیے پرتعیش زندگی کا انتخاب کیا ہے۔" متن : اسلامی مشاورتی اسمبلی میں خمینی شہر کے عوام کے نمائندے حجت الاسلام محمدتقی نقدعلی نے فارس نیوز ایجنسی کے ساتھ انٹرویو میں بانی انقلاب اسلامی کے غیر متزلزل عہدوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا: حالیہ برسوں میں رہبر معظم نے بارہا تاکید کی ہے۔ امام خمینی کا مکتب؛ امام (رہ) کا مکتب اسلام اور اہل بیت (ع) اور قرآن کا ایک ہی مکتب ہے۔ انہوں نے مزید کہا: "امام کے علمی مقام اور ان کے پیشہ اور انتظام کے طریقہ کار کا ایک مظہر یہ تھا کہ وہ ہمیشہ بانی انقلاب اسلامی کو لوگوں کے دلوں میں سنتے تھے اور لوگوں کے ساتھ تھے۔" اسلامی مشاورتی اسمبلی میں خمینی شہر کے عوام کے نمائندے نے کہا: انقلاب سے پہلے اور انقلاب کے بعد بانی انقلاب اسلامی کی زندگی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی اور سادگی ہمیشہ ان کے اسلوب اور زندگی کا نصب العین رہی اور انہوں نے اپنی زندگی میں کبھی تبدیلی نہیں کی۔ اور ایک مقبول طریقہ اور پیشہ تھا۔ نقدلی نے کہا: جب نجف اشرف میں امام خمینی کے لیے کولرڈیوائس فراہم کرنا تھا اور انقلاب اسلامی کی فتح سے پہلے وہ اس پر راضی نہیں ہوئے اور کہا؛ "میں یہ ڈیوائس اس وقت تک استعمال نہیں کروں گا جب تک کہ تمام درخواست دہندگان کو ایسی سہولیات میسر نہ ہوں"؛ مزید برآں، انقلاب کی فتح کے بعد جب جماران کے محلے میں آباد ہوئے، جب جماران حسینیہ کو لیس اور پینٹنگ اور پلستر کرنا تھا، تو انہوں نے اس کی اجازت نہیں دی۔ انہوں نے کہا: "بدقسمتی سے کچھ لوگ جنہوں نے اپنے آپ کو ذمہ دار قرار دیا ہے وہ مکتب امام (رہ) میں تبدیلی اور انحراف کی تلاش میں ہیں اور بعض اوقات اس مکتب کو مسخ اور بدل دیا گیا"۔ اسلامی مشاورتی اسمبلی میں خمینی شہر کے عوام کے نمائندے نے کہا: بدقسمتی سے بعض حکام میں سادگی اور جمہوریت میں امام کا طریقہ اور پیشہ بدل گیا ہے اور انہوں نے عیش و عشرت کی زندگی کا انتخاب کیا ہے جبکہ رہبر معظم نے بارہا اس کے خلاف تنبیہ کی ہے۔ مکتبِ امامت کو توڑ مروڑ کر تبدیل کیا جائے۔ لوگ امام خمینی (رہ) کے مکتب کے مطابق ہیں، انہیں اس طرح کا برتاؤ کرنا چاہئے کہ جو لوگ امام خمینی (رہ) کے طرز اور طریقہ سے الگ ہیں وہ عوامپر بالکل واضح ہوں۔ جیسا کہ انہوں نے ان لوگوں کو مسترد کر دیا ہے مستقبل میں ان کے ساتھ ویسا ہی سلوک کریں۔